Aviation News Civil Aviation Authority PIA

PIA plane stuck at Quetta airport due to lack of de-icing facility

PIA Airbus A320 AP-BLW stuck at Quetta airport.

A Pakistan International Airlines plane was stuck at Quetta’s international airport due to lack of de-icing facility at the airport. According to PIA spokesperson Abdullah Khan, the aircraft arrived from Jeddah on flight PK768 on Airbus AP-BLW and it was going to fly onwards but as soon as the aircraft landed due to snowfall the aircraft wings and other parts got ice buildup on them.

According to PIA, it is the Pakistan Civil Aviation Authority’s responsibility to provide de-icing facilities at airports. On the other hand, the spokesperson for CAA joint secretary Abdul Sattar Khokhar said in a statement that “Deicing at QIAP has been ensured for runway and taxiway. That has been done throughout the snowfall period. And all facilities related to PCAA are available. Whereas for the deicing facility for aircraft wings its mentioned as Nil in AIP for Quetta. As the same requires a specialized deicing agent, equipment and certification. That is not available at any station in Pakistan including Skardu. As per ICAO document 9640 chapter 07 Para 7.4 it’s the responsibility of aircraft operator”.

PK 325/326 Islamabad Quetta Islamabad cancelled PK 310/311 Karachi Quetta Karachi cancelled PK 8363 Quetta Karachi cancelled also spokesman Flights will be restored as weather conditions improve, spokesman PIA Abdullah Khan said We apologize for passenger inconvenience, however, the situation is beyond our control. PIA staff and call center are available to guide our passengers by contacting PIA translator AbdullahKhan.

پاکستان کے قومی فضائی کمپنی پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز کا طیارہ کوئٹہ میں ڈی آئسنگ یعنی طیارے پر برف نہ جمنے دینے کا انتظام کرنے کا سازوسامان نہ ہونے کی وجہ سے پھنس گیا ہے۔ 

پاکستان انٹرنیشنل ایئرلائنز کی ترجمان عبداللہ خان نے ایک بیان میں کہا کہ جب کوئٹہ آنے والی پرواز اتری تو برف باری شروع ہوگئی جس کے بعد طیارہ پھنس گیا۔ انھوں نے بتایا ”ایسے موسم میں ڈی ائسنگ (جہاز اور انجن پر سے برف اتارنا) کی ضرورت پڑتی ہے جوکہ کوئٹہ ائیرپورٹ کے پاس مہیا نہیں کی گئی۔ یہ سہولت مہیا کرنا ائیرپورٹ یعنی سول ایوایشن کا کام ہے“۔ 

دوسری جانب جب پاکستان سول ایوی ایشن اتھارٹی سے بات کی گئی تو ان کی ترجمان عبدالستار کھوکھر نے بی بی سی بات کر تے ہوئے بتایا کہ ”پاکستان کے چند ہوائی اڈوں پر رن وے اور ٹارمیک پر برف اتارنے کا سازوسامان تو دستیاب ہہے مگر طیاروں پر سے برف اتارنے کا انتظام موجود نہیں ہے کیونکہ کبھی اس کے اتنی ضرورت ہی نہیں پڑی“۔

 سول ایوی ایشن اتھارٹی کے مطابق تمام ایئرلائنز کو اس بارے میں آگاہ کیا گیا ہے کہ وہ اس قسم کی صورتحال سے نمٹنے کے لیے اپنا انتظام خود کریں۔ تاہم انھوں نے کہا کہ چونکہ موسمیاتی تبدیلیا رونما ہو رہی ہیں تو سول ایوی ایشن اس صورتحال سے نمٹنے کے لیے بہت ساری تبدیلیاں کر رہی ہے اور اس پہلو پر بھی غور کیا جائے گا۔ مگر چونکہ اکا دکا دن برف باری ہوتی ہے تو اس لیے ہمیں کبھی اتنی ضرورت نہیں پڑی“۔

انھوں نے مزید کہا کہ ” کوئٹہ کے بین الاقوامی ہوائی اڈے کے رن وے اور ٹیکسی وے پر برف ہٹا دی گئی تھی۔ اور یہ برفباری کے دنوں میں کیا جاتا رہا ہے۔ طیاروں کے پروں پر برف ہٹانے کا کام کرنے کے لیے کوئی سازوسامان کوئٹہ کے ہوائی اڈے پر موجود نہیں ہے۔ کیونکہ اس کے لیے مخصوص ایجنٹس اور آلات درکار ہوتے ہیں اور خصوصی سرٹیفیکیشن چاہیے ہوتی ہے۔ یہ پاکستان کے کسی بھی ہوائی اڈے پر دستیاب نہیں ہے۔ یہ سکردو میں بھی دستیاب نہیں ہے۔ بین الاقوامی شہری ہوابازی کے قوانین کے مطابق یہ طیارہ آپریٹ کرنے والوں کی ذمہ داری ہوتی ہے“۔

جب پی آئی اے سے اس بارے میں پوچھا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ ”پوری دنیا میں اس قسم کی سہولیات فراہم کرنا ریگولیٹر اور نگران اداروں کا کام ہے۔ ایئرلائینز ایسا انتظام نہیں کر سکتیں۔“ 

یاد رہے کہ پی آئی اے نے برف اور ضروری سامان اور کیمیکلز کی کوئٹہ ائیرپورٹ پر غیر موجودگی کے باعث دیگر پروازیں منسوخ کردی ہیں جن میں اسلام آباد کوئٹہ  اسلام آباد، کراچی کوئٹہ کراچی منسوخ کردی گئی ہیں۔ پی آئی اے کی مطابق موسم کی صورتحال بہتر ہوتے ہی یہ پروازیں بحال کردی جائیں گی۔

Comments

About the author

pkaviation

Add Comment

Click here to post a comment

1 + fifteen =

+ 1 = 4

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.